میریم ویبسٹر ڈکشنری کیمطابق

Misogyny

کی تعریف “خواتین سے نفرت” کے طور پر کی گئی ہے۔  طویل عرصے سے یہ لفظ ایک بنیادی الزام سمجھا جاتا تھا اور روزانہ کی گفتگو میں شاذ و نادر ہی استعمال ہوتا تھا۔ جب سے یہ لفظ مقبول ہوا ہے اسے خبروں کی سرخیوں، ٹویٹس، فلموں، کہانیوں اور میمز میں تلاش کرنا کوئی غیر معمولی بات ہی نہیں رہی ہے۔اس کے باوجود کہ اس لفظ کے ساتھ بڑھتی ہوئی پہچان عورتوں کے خلاف امتیازی سلوک کی عام قبولیت کی طرف اشارہ کرتی ہے جو بدانتظامی بیماریوں سے متعلق دنیا بھر میں منظم طور پر ظاہر ہوتی ہیں اور غلط تشخیصی اقدار کے ظاہر ہونے سے انکاری ہوتی ہیں۔

غلط فہمی کی اصطلاح 17 ویں صدی میں اس وقت سامنے آئی جب جوزف سوئٹنم نامی انگریز فنسنگ ماسٹر نے اس پر خواتین مخالف نعروں کے ساتھ ایک پمفلٹ لکھا تھا۔ عورتوں کو فحش، بیکار اور ناگوار کہنے والی اس تحریر کو اس زمانے میں شائع کیا گیا جب معاشرے میں خواتین کے حوالے سے ہونے والی بحث کیوجہ سے پیداشدہ ابتدائی جدید اضطراب نے پیٹریاکل ( معاشرتی تنظیم کی ایک شکل کی خصوصیت جس میں مرد خاندانی سربراہ ہوتا ہے ) آرڈر کو خطرات سے دوچار کر دیا تھا۔ سویٹ نام نے لکھا خواتین فطرتاً ہی ٹیڑھی ہیں۔ ان کے بقول خوبصورت ترین عورتیں میں بھی کچھ غلاظتیں ہوتی ہیں۔ اس نوٹ پر خواتین کی جانب سے کافی تنقیدی ردعمل سامنے آیا۔ اس کے ساتھ ہی ایک گمنام حقوق نسواں کے حامی مصنف نے “سویٹ نام دی ویمن ہیٹر، خواتین کے ذریعہ پیش کردہ” کے نام سے ایک ڈرامہ لکھا جس کے ذریعے اس کردار کشی کرنے والے کردار کا نام مسوگینوس رکھا گیا۔

لفظ آسمانی کا استعمال بیسوی صدی کے آخر میں حقوق نسواں کی دوسری لہر کے ساتھ موافق ہے۔ تاہم اس کی مقبولیت کے باوجود بدعنوانی کی جڑیں پاکستان سمیت دنیا بھر کی ثقافتوں اور اداروں میں گہری ہیں۔ غلط تشخیصی اقدار کے اندرونی ہونے کی وجہ سے لوگ ان افعال کو تسلیم کرنے میں ناکام رہتے ہیں جو صنفی عدم مساوات کی وجہ بنتے ہیں۔ نہ صرف یہ بلکہ بدانتظامی لوگوں کو لاشعوری طور پر دوسری عورتوں پر بھی اپنے جنسی تعلقات کو ظاہر کرنے کی رہنمائی کر رہی ہوتی ہے۔ معاشرتی اور سیاسی تماشائیوں میں ایسی بہت ساری مثالیں دیکھنے میں آئیں جہاں خواتین کو صرف مردوں ہی نہیں بلکہ دیگر خواتین نے بھی بدنام کیا ہے۔ مثال کے طور پر پاکستانی سینما کی تاریخ کے اونچے درجے والے ڈراموں میں سے ایک “میرے پاس تم ہو” میں بد نظمیاتی مکالموں پر سامعین کی تالیاں پاکستانی معاشرے میں داخلی پستی کی عکاسی کرتی ہیں۔

“میرے پاس تم ہو” ایک ایسے خاندان کی کہانی کے گرد گھوم رہی ہے جہاں بیوی اپنے متوسط طبقے کے شوہر اور اپنے بچے کو اپنے مالامال مالک کے لیے چھوڑتی ہے۔ حیرت کی بات نہیں جب ایسا ہوتا ہے تو پاکستانی ناظرین ٹوئٹر پر پہنچتے ہیں تاکہ دھوکہ کھانے والے شوہر دانش سے اپنی حمایت اور ہمدردی ظاہر کر سکیں۔ اسی اثناء میں مہوش کافر بیوی کو ایک “بری عورت” کہا جاتا ہے جو اپنے کنبے کا کوئی لحاظ نہیں رکھتی اور مادری خوبیوں لاتعلقی اختیار کرتی ہے۔ ستم ظریفی کی بات یہ ہے کہ جب اسے اپنے ساتھی شہوار سے دھوکہ دہی پر شرمندگی کا سامنا کرنا پڑتا ہے تو شرمندگی صرف عورت اور عورت نامی مخلوق کے حصّے میں آتی ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اخلاقی خرابیوں کا قصور اس عورت پر ہے جس نے دھوکہ دیا اور اس آدمی پر نہیں جو اپنی بیوی کو بھی دھوکہ دیتا ہے۔

دل کی گہرائیوں سے گمراہ کن غلط فہمی کا اظہار پورے میدانوں میں استعمال ہونے والے سیمنٹک میں بھی ہوتا ہے۔ “مرد ہونا” “عورت کی طرح بات کرنا” اور “سیسی نہ بنو” جیسے جملے غلط تشریحات کو اندرونی بنانے کا نتیجہ ہیں۔ وہ الفاظ جو خواتین کو مخاطب کرنے کے لئے استعمال ہوتے ہیں وہ اکثر مردوں کی توہین کرنے کے لئے طنز آمیز ریمارکس کے طور پر استعمال ہوتے ہیں۔ مزید برآں جن خواتین نے بدنیتی پرستی کی ہے وہ اپنی پسند کی وجہ سے دوسری خواتین کو شرمندہ تعبیر کرتی ہیں اور ڈرامے میں مہوش کا کردار اس کی عکاسی کرتا ہے۔ خواتین اپنے جیسی دوسری خواتین کے ساتھ غیرصحت مند مقابلے میں مبتلا ہیں اس کی ایک اور مثال ہے کہ بعض اوقات خواتین کس طرح ایک جنسی تعصب زدہ ثقافت کے ساتھ ملی بھگت کر کے اپنی طاقت کا غلط استعمال کرتی ہیں۔

اسی طرح عورت مارچ کے شرکاء کو نشانہ بنائے جانے والے سالانہ ردعمل کا مطلب یہ ہے کہ ہماری ثقافت میں جنسی جذبات کی سطح کے بارے میں آگاہی دی جائے۔ ہر سال مارچ کے شرکاء کو پلے کارڈز جن پر مردوں کی جنس پرستی اور بدتمیزی سے متعلق نعرے درج ہوتے ہیں اٹھانے پر جان سے مارنے اور عصمت دری کی دھمکیاں ملتی ہیں۔ بیشتر پاکستانی مرد اور خواتین جنہوں نے بدنامی کو اندرونی طور پر گھیر لیا ہے ان کے بارے میں خواتین کا معاشرے کے اخلاقی تانے بانے کے لئے ہونا ہی ایک خطرہ ہے۔ یہی وجہ ہے جس کی وجہ سے ملک میں متاثرین پر الزامات لگانا ایک عام بات ہے۔ گذشتہ سال عورت مارچ کے ایک مہینے کے اندر ہی عصمت دری کی شکار لڑکی کی والدہ کو اس کی وجہ سے شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا۔ لوگوں نے دعوی کیا کہ اگر اسکی والدہ ریپسٹ کے ساتھ نا گھوما پھرا کرتی تو اس کی بیٹی کے ساتھ عصمت دری نہیں کی جاتی۔ اس طرح کے الزامات پاکستان میں یا دنیا کے کسی بھی دوسرے خاص ملک میں کوئی افسانہ نہیں ہیں۔ تاہم یہ ضروری ہے کہ لوگ اپنے اندرونی نوعیت کی غلط فہمی اور جنسی پسندی کی اقدار کو ناپسند کریں۔

پاکستان کو یا کوئی بھی معاشرہ کہیں نہ کہیں خواتین کیساتھ ضنفی دقیانوسیت لاشعوری ہے۔ندرونی بدانتظامی پر قابو پانے کا ایک طریقہ یہ ہو گا کہ اس حقیقت کو قبول کیا جائے کہ معاشرے نے بد نظمی اقدار کو اندرونی بنا دیا ہے جو ان کے تمام اعمال کی رہنمائی کرتی ہے۔ کسی کے خدوخال کو قبول کرنے سے وہ بڑے اداروں میں کھیل میں غلط فہمی کو پہچاننے میں مدد کرسکتے ہیں۔ اب وقت آگیا ہے کہ ہم ایک قوم کی حیثیت سے اپنی ثقافت میں ۔۔۔گہرائیوں سے قائم غلط فہم اقدار پر مباحثہ کریں اور خواتین کے ساتھ ہمدردی کرنا سیکھیں

 ترجمہ :سید حسیب حیدر۔

Share.

About Author

Avatar

Hatoon Gul is a Turbat based YES alumna studying Social Development and Policy at Habib University, Karachi.

Leave A Reply